محاذ آزادی افغانستان کے حملوں میں شدت، متعدد طالبان اہلکار ہلاک

0
7

طالبان حکومت کی فورسز پر لبریشن فرنٹ آف افغانستان کے حملوں کے بعد افغانستان کے دو صوبوں میں ہونے والے ان حملوں میں طالبان کے تین اہلکار ہلاک اور چھے زخمی ہوگئے ہیں۔

محاذ آزادی افغانستان کی طرف سے جاری کردہ پریس ریلیز میں کہا گیا ہے کہ ان کی فورسز نے اتوار کے روز  صوبہ اندراب کے دیہہ صلاح شہر میں “تپہ برتا” کے علاقے میں طالبان کی چوکی پر حملہ کیا۔ جس کے نتیجے میں دو مسلح طالبان ہلاک اور تین زخمی ہو گئے۔

محاذ آزادی کے خبرنامے کے مطابق “تپہ لقاء” چوکی صوبہ اندراب میں طالبان کے اجتماع اور سرگرمیوں کے اہم مراکز میں سے ایک ہے اور طالبان کی جس چوکی پر حملہ کیا گیا اس نے “محاذ آزادی” کے نقل و حمل کے راستے میں خلل ڈالا تھا۔

ادھر لبریشن فرنٹ آف افغانستان کی فورسز کا کہنا ہے کہ اتوار کی صبح نو بجے کے قریب انہوں نے بلخ جیل کے داخلی دروازے پر حملہ کیا جس میں ایک طالبان فوجی ہلاک اور تین زخمی ہوئے۔

اس گروپ کا کہنا ہے کہ بلخ سینٹرل جیل پر حملے میں فریڈم فرنٹ فورسز کو کوئی نقصان نہیں پہنچا۔ طالبان گروپ نے “محاذ آزادی افغانستان” کے اتوار کے حملوں پر تاحال کوئی تبصرہ نہیں کیا ہے۔ تاہم افغانستان لبریشن فرنٹ نے دونوں حملوں کی ویڈیوز بھی سوشل میڈیا پر پوسٹ کیں۔

ان ویڈیوز میں دیکھا جا سکتا ہے کہ آزادی فرنٹ کے اہلکار اندراب میں طالبان کی چوکی اور صوبہ بلخ کی مرکزی جیل کے داخلی دروازے پر بھی فائرنگ کر رہے ہیں۔

محاذ آزادی دو سال قبل قائم ہونے والی طالبان مخالف تحریکوں میں سے ایک ہے۔ اس محاذ کی قیادت افغان نیشنل آرمی کے کئی سابق کمانڈر کر رہے ہیں۔

قومی مزاحمتی محاذ اور آزادی فرنٹ کی طالبان کے خلاف عسکری سرگرمیاں جاری ہیں۔

ان دونوں گروپوں کے حملے زیادہ تر گوریلا نوعیت کے ہیں۔

گزشتہ ہفتے شمالی افغانستان کے بغلان میں طالبان کمانڈروں میں سے ایک ملا گلالی اور اس گروپ کے دو دیگر ارکان افغانستان لبریشن فرنٹ کے حملے میں مارے گئے تھے۔
اس سے کچھ دیر پہلے “لبریشن فرنٹ آف افغانستان” نے اعلان کیا تھا کہ اس نے کابل شہر کے ضلع 11 میں طالبان کی چوکی پر حملہ کیا ہے اور اس حملے میں طالبان کے چار اہلکار ہلاک اور چھ زخمی ہوئے ہیں۔

اس محاذ کے بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ حملہ بدھ کی رات 8 بجکر 25 منٹ پر “پنجشیر وات” کے علاقے میں ہوا اور زخمیوں میں طالبان کا ایک رہنما بھی شامل ہے۔

یہ حملے ایسے وقت میں ہوئے ہیں جب طالبان کے اعلیٰ عہدیداروں نے کابل میں اپنے اقتدار کے دو سال مکمل ہونے کی تقریب میں دعویٰ کیا تھا کہ افغانستان میں سکیورٹی کو یقینی بنایا گیا ہے اور اس گروپ کے خلاف کوئی فعال فوجی محاذ نہیں ہے۔

تاہم اقوام متحدہ کے ماہرین نے افغانستان پر طالبان کی حکومت کی دوسری سالگرہ کے موقع پر ایک بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ یہ سوچنا غلط ہے کہ طالبان نے “اصلاح” کر لی ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ گزشتہ دو سالوں میں طالبان کی پالیسیوں کی وجہ سے افغان شہریوں کی تعلیم، کام اور آزادی کے حق سمیت کئی انسانی حقوق کی مسلسل خلاف ورزی ہوئی ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ ماورائے عدالت پھانسیوں اور دیگر غیر عدالتی طریقوں جیسے جبری گمشدگیوں، وسیع پیمانے پر من مانی حراستوں، تشدد اور ناروا سلوک کے ساتھ ساتھ لوگوں کی من مانی نقل مکانی کی رپورٹوں نے طالبان انتظامیہ کے بارے میں خدشات کو جنم دیا ہے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں