آرٹیکل370 کے اختتام کے بعد کشمیر ترقی کے راہ پر گامزن ۔ جنید کمال

0
144

کشمیر میں آرٹیکل370 اور35 اے کے خاتمے کے بعد عوام ترقی و خوشحالی کی جانب گامزن ہیں،حالانکہ پاکستان اور کشمیر میں موجود تین سیاسی خاندانوں نے اسکے خلاف بہت شور کیا اور دہشت گردی کے واقعات میں اضافہ بھی ہوا،اسکے علاوہ ان نام نہاد سیاست دانوں نے کشمیری عوام کو بھکانے کی کوشش کرتے ہوئے شور شرابہ اور مظاہرئے بھی کروائے۔

ذرائع بتاتے ہیں کہ ان تمام واقعات کے پیچھے پاکستانی بدنام خفیہ ایجنسی آئی ایس آئی اور وہاں کے چند مقامی سیاست دانوں کا ہاتھ تھا، اگر ہم370 اور35 اے کے خاتمے کے نقصانات کا جائزہ لیں تو وہاں صرف ایک نقصان دیکھائی دیتا ہے اور وہ ہے جن خاندانوں نے وہاں سیاسی راج کیا ہے،انکے فائدے کی دکان اس آرٹیکل کے بعد بند ہوئی ہے۔اسکی ایک عام مثال کہ کشمیر کے لیے کربوں روپوں کی جو فنڈ جاری ہوتے تھے وہ ان تین خاندانوں اور انکے لے پالکوں کو جاتا تھا،،اور بندر بانٹ کر کے ان فنڈز،بجٹ کا ساٹھ سے زائد فیصد ہڑہ کر جاتے تھے۔اور 370 اے35 کے ہوتے ہوئے ہندوستان کی مرکزی حکومت احتساب کا حق نہیں رکھتی تھی اور ان سے پوچھنے والا کوئی نہیں تھا،جو یقینا عام عوام کے فائدہ میں نہیں تھا۔

اب ان آرٹیکلز کے اختتام کے بعد ان نام نہاد سیاسی منافع خوروں کی دکان بند ہونے کی وجہ سے یہ لوگ عام عوام کو اکسانے کی کوشش کر رہے ہیں،مگر اب آہستہ آہستہ کشمیر کے عوام میں شعور اور ان آرٹیکلز کے ختم ہونے کے فوائد سامنے آنے لگے ہیں۔عوام ترقی کی راہ پر گامزن اور بنیادی سہولیات میں ہندوستان کے شہریوں کے ساتھ آئینی حق رکھتے ہیں۔

اب دو سال ہوچکے ہیں جب مرکز میں نریندر مودی کی زیرقیادت نیشنل ڈیموکریٹک الائنس (این ڈی اے) حکومت نے آرٹیکل 370 اور 35 (اے) کو منسوخ کردیا۔
فوری نتائج بھارتی آئین اور جموں و کشمیر کے تمام 890 اہم مرکزی قوانین کو اپنانے اور ان کا اطلاق تھے جن میں ترقی پسند قوانین جیسے درج فہرست قبائل (مظالم کی روک تھام) ایکٹ 1954، سیٹی اڑانے والے تحفظ ایکٹ، 2014 شامل ہیں۔، نیشنل کمیشن برائے صفائی کرمچاریز ایکٹ، 1993، شیڈولڈ ٹرائبز ایکٹ، 2007، قومی کمیشن برائے اقلیتی ایکٹ، اور بچوں کا حقمفت اور لازمی تعلیم ایکٹ،۔
اس کے اوپر، حقائق اور اعداد و شمار اس بات کو ظاہر کرنے کے لیے کافی ہیں کہ وادی میں تمام محاذوں سیاسی، معاشی اور سلامتی کی صورتحال اپنی تاریخ میں پہلے سے بہتر ہے۔ کم تشدد اور زیادہ پیش رفت یونین ٹریٹری کے مستقبل کے لیے امید کی علامت ہے۔

آرٹیکل 370 کی منسوخی کے بعد سے جموں و کشمیر میں بڑی تبدیلیاں ہوئی ہیں،
معاشی اقدامات۔
مرکزی وزیر خزانہ نرملا سیتارمن نے 17 مارچ 2021 کو جموں و کشمیر کے 1،08،621 کروڑ روپے کے بجٹ کی نقاب کشائی کی جس میں سے 39،817 کروڑ روپے سرمائے کے اخراجات اور 68،804 کروڑ روپے آمدنی کے اخراجات کے لیے رکھے گئے تھے۔ اس کا مطلب ہے کہ مختص بجٹ کا 37 فیصد ترقیاتی اور بنیادی ڈھانچے کے منصوبوں پر خرچ کیا جانا ہے۔

حکومت نے پہلی بار ڈسٹرکٹ ڈویلپمنٹ کونسلز اور بلاک ڈویلپمنٹ کونسلز کے لیے ترقیاتی فنڈز مختص کیے۔
بجٹ دستاویز کے مطابق 200 کروڑ روپے ڈی ڈی سی کے لیے مختص کیے گئے ہیں اور ہر ڈی ڈی سی کو 2021-22 میں 10 کروڑ روپے ملیں گے۔ اسی طرح 285 بلاک ڈویلپمنٹ کونسلوں کے لیے 71.25 کروڑ روپے ‘ترقیاتی فنڈ’ کے طور پر تجویز کیے گئے ہیں۔ اس کا مطلب ہے کہ ہر بی ڈی سی کو ترقیاتی مقاصد کے لیے 25 لاکھ روپے ملیں گے۔ حکومت نے اس کے قیام کے لیے 30 کروڑ روپے خرچ کرنے کی تجویز بھی دی۔ دستاویزات سے پتہ چلتا ہے کہ دیہی اور شہری انفراسٹرکچر کے لیے تقریبا 1313 کروڑ روپے فراہم کیے گئے ہیں۔جنوری 2021 میں جے اینڈ کے حکومت نے ایک تاریخی معاہدہ کیا۔ (ایم او یو)زرعی کوآپریٹو مارکیٹنگ فیڈریشن آف انڈیا لمیٹڈ، زرعی پیداوار معاہدے کے ایک حصے کے طور پر، 1700 کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کرے گا یا 5500 میں ہائی ڈینسٹی پلانٹس کو نافذ کرے گا،اگلے 5 سالوں میں ہیکٹرس،ایپل، اخروٹ، چیری، ناشپاتی کے اعلی کثافت والے پودوں کی فارمنگ ہو گی۔
پھولوں سے کسانوں کی آمدنی میں 3-4 گنا اضافہ متوقع ہے۔ سیب کے اعلی کثافت والے پودے ہوں گے۔کشتواڑ اور بھدرواہ میں نافذ 20 فارمر پروڈیوسر آرگنائزیشن قائم کرے گا، ہر ضلع میں ایک یہ 3 کولڈ اسٹوریج کلسٹرس بھی تعمیر کرے گا،یک ایک شمالی کشمیر، جنوبی کشمیر اور کٹھوعہ میں 500 کروڑ روپے کی لاگت سے۔
برانڈنگ اور مارکیٹنگ کے مقصد کے لیے، این اے ایف ڈی پھلوں کی فصلوں جیسے ایپل، اخروٹ، چیری، زیتون، لیچی کے لیے جغرافیائی اشارے ٹیگز (کو یقینی بنائے گا۔

مئی 2021 میں جموں و کشمیر حکومت نے ایک معاہدے پر دستخط کیے۔نجی ایئرلائن گو ائیر کے ساتھ مفاہمت کی یادداشت میں کہا گیا کہ
جولائی 2021 میں حکومت جموں و کشمیر نے پہلی بار سری نگر سے دبئی کو مشری چیری کی برآمد شروع کی۔

ترمیم کے بعد، جموں و کشمیر نے اکتوبر 2019 میں اپنے پہلے بلاک ڈویلپمنٹ پولز کا مشاہدہ کیا، اور 98.3 فیصد کے متاثر کن ووٹر ٹرن آؤٹ کو دیکھا، اس عمل میں 310 بلاکس اور 1،092 امیدواروں کے لیے بی ڈی سی کے چیئرپرسن کا انتخاب کیا گیا۔

جے اینڈ کے یونین ٹیریٹری کے وہ اضلاع جن کے لیے انتخابات ہوئے تھے۔آٹھ مراحل میں کیا گیا۔ جموں کشمیر میں مختلف عوامل کی وجہ سے پریشانی کے خدشات کے باوجود انتخابات پرامن طریقے سے ہوئے۔ کریڈٹ سول انتظامیہ اور سیکورٹی فورسز کو جاتا ہے جنہوں نے اس جمہوری مشق کو کامیاب بنایا۔

ضلع ترقیاتی کونسلوں کے ساتھ دیگر دو اداروں، ہلکا پنچایتوں اور بلاک ترقیاتی کونسلوں نے جموں و کشمیر میں تین درجے کا ڈھانچہ مکمل کیا۔ اس قدم سے عام لوگوں کو اب بلدیاتی اداروں کا انتظام کرنے کا اختیار حاصل ہے کیونکہ وہ اپنے مقامی نمائندے منتخب کر سکتے ہیں اور مختلف فلاحی اسکیموں پر عمل درآمد کے علاوہ ضلعی اور بلاک سطح کی منصوبہ بندی کر سکیں گے۔

آرٹیکل 370 کی منسوخی سے پہلے 29 جون 2018 سے 4 اگست 2019 تک (کل 402 دن) جموں و کشمیر میں 455 دہشت گردی
کے واقعات ہوئے جبکہ 5 اگست 2019 سے 9 ستمبر 2020 تک (402 دن)، مرکز کے زیر انتظام علاقے میں دہشت گردی کے 211 واقعات ہوئے۔دہشت گرد تنظیموں میں مقامی نوجوانوں کی شمولیت میں 40 فیصد کمی واقع ہوئی ہے کیونکہ وادی کشمیر کے صرف 67 نوجوانوں کی برین واش کی گئی اور انہیں بھارت کے خلاف بندوقیں اٹھانے کے لیے بنایا گیا۔

مرکزی وزارت داخلہ کی رپورٹ کے مطابق 5 اگست کے بعد وادی کشمیر میں تشدد کے واقعات میں نمایاں کمی آئی ہے اور سیکورٹی فورسز نے دہشت گردوں کے خلاف بڑی کامیابی حاصل کی ہے، جس میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ وادی میں دہشت گردی سے متعلقہ سرگرمیوں میں تقریبا 36 36 فیصد کمی آئی ہے۔وادی کشمیر میں یکم جنوری سے 15 جولائی 2019 تک 188 دہشتگردی سے متعلق واقعات ریکارڈ کیے گئے اور یہ تعداد 2020 میں کم ہو کر 120 رہ گئی ہے۔ 2020 میں اسی وقت کے دوران دہشت گردوں کا خاتمہ کیا گیا۔کشمیر میں یکم جنوری سے 15 جولائی 2019 تک 51 گرینیڈ حملے ہوئے جبکہ 2020 میں یہ تعداد کم ہو کر صرف 21 رہ گئی ہے۔2019 میں، 75 سیکورٹی اہلکار اور 23 شہری ہلاک ہوئے۔

آئی ای ڈی حملوں کی تعداد میں بھی نمایاں کمی آئی ہے کیونکہ یکم جنوری سے 15 جولائی 2020 تک کشمیر میں صرف ایک آئی ای ڈی حملہ ہوا۔2019 میں اسی عرصے کے دوران آئی ای ڈی حملوں کی تعداد چھ تھی۔ کشمیر میں 2020 میں اب تک مجموعی طور پر 110 مقامی دہشت گرد مارے جا چکے ہیں، جن میں حزب المجاہدین کے 50 سے زائد اور لشکر طیبہ اور جیش محمد کے 20 کے قریب شامل ہیں۔ اسی مدت کے دوران آئی ایس جے کے اور انصار غزوات الہند کے کم از کم 14 دہشت گردوں کو بھی سکیورٹی فورسز نے ختم کر دیا۔

وادی میں 30 جولائی تک مجموعی طور پر 148 دہشت گرد مارے گئے۔ ان میں سے 48 دہشت گرد صرف جون کے مہینے میں مارے گئے۔

کچھ مطلوب دہشت گرد جیسے حزب کمانڈر ریاض نائیکو،لشکر کمانڈر حیدر، جیش کمانڈر کیری یاسر اور انصار غزوات الہند برہان کوکا 2020 میں سیکورٹی فورسز کے ہاتھوں مارے گئے تھے۔ سیکورٹی فورسز نے 15 جولائی تک دہشت گردی کے 22 ٹھکانوں کو بھی تباہ کیا اور 190 اے کے 47 رائفلوں سمیت 190 ہتھیار بھی برآمد کیے۔
وزیر اعظم نریندر مودی نے اس سال کے اوائل میں جموں و کشمیر میں 272 کلومیٹر طویل ادھم پور-سری نگر-بارہمولہ ریلوے لائن
کے لیے 2021 کے وسط اور 2025 کے درمیان ایک نئی ڈیڈ لائن طے کی۔ 28کروڑ روپے کا میگا پروجیکٹ وادی کشمیر کو ملک کے دیگر حصوں کے ساتھ ملائے گا۔

جموں و کشمیر میں بجلی کے بنیادی ڈھانچے کو مضبوط بنانے کے لیے ایک اہم اقدام میں، لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا 03 اپریل کو118.91 کروڑ روپے کے 17 پاور پراجیکٹس کا ای افتتاح کیا۔

یہ تمام اعداد وشمار اس بات کا ثبوت یا تجزیہ کے لیے کافی ہیں کہ ان آرٹیکلز کے اختتام سے کشمیری عوام کو کتنا فائدہ ہوا اور کشمیر ترقی کی کس دشا پر گامزن ہے۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں