کریمہ ایک روشنی ہے جسے چاہ کر بھی کوئی روک نہیں سکتا، کراچی میں سیمینار

0
70

بلوچ یکجہتی کمیٹی (کراچی) کی جانب سے بلوچ قومی لیڈر بانُک کریمہ بلوچ کی پہلی برسی کی مناسبت سے کراچی پریس کلب میں ایک سیمینار کا انعقاد کیا گیا جس میں مہمانِ خصوصی واجہ میر محمد علی تالپور، وائس آف بلوچ مِسنگ پرسنز کے ماما قدیر بلوچ، فاطمہ زیدی، جرنلسٹ عاجز جمالی، پختون اسٹوڈنٹس فیڈریشن سے رحمان بابر، عورت فاؤنڈیشن سے ماہ ناز، شیما کرمانی، نغمہ اقتدار، جئے سندھ قومی محاز کے مرکزی رہنما الہی بخش بکک، انیس ہارون، وائس آف بلوچ مِسنگ پرسنز کی سمّی دین محمد سمیت بلوچ یکجہتی کمیٹی (کراچی) کی آرگنائزر آمنہ بلوچ نے خطاب کیا اور آخر میں مشعلیں جلا کر بانُک کو ٹریبیوٹ دیا گیا۔ بانُک کریمّہ کی یاد میں سیمینار میں موجود کوئی آنکھ ایسی نہیں تھی جو اشک بار نہیں تھی۔

فاطمہ زیدی نے اپنے خطاب کا آغاز عوامی ورکرز پارٹی کے خُرّم علی کی نظم سے کیا جو بانُک کے نام تھا اور بانُک کے سیاسی شعور کو سراہا کہ کس طرح بانُک کو اپنے دوستوں اور دشمنوں کی پہچان تھی اور کس طرح بانُک اپنے دوستوں کو قریب رکھتی تھیں اور اُن پر اعتبار کرتی تھیں۔ اُن کے فیصلہ لینے کی قوت کے بارے میں فاطمہ نے بیان کیا کہ بانُک کبھی بھی فیصلہ لینے میں ہچکچاتی نہیں تھی۔

رحمان بابر نے بانُک کو سلام پیش کرتے ہوئے فرمایا کہ ریاست بلوچ اور پختون لیڈران کو مختلف ہتھکنڈوں سے ٹارچر کر اور موت کے دہانے پر پہنچاتی ہے جس سے ریاست اپنے لئے نفرت کا خود ہی آغاز کرتی ہے۔ اگر ریاست مفاہمت کی پالیسی رکھے تو شاید حالات اس قدر خراب نہ ہوں گے۔ نغمہ اقتدار نے اپنے خطاب میں کہا کہ کریمّہ ایک سوچ نہیں بلکہ بزاتِ خود ایک جہد کا نام ہے۔ 21 دسمبر کریمّہ کی شہادت کا نہیں بلکہ بلوچ عورتوں کا دن ہے، اس دن بلوچ خواتین اپنی سیاسی جہد کو منائیں جو کریمّہ کی دین ہے۔

سمّی دین محمد نے اپنے خطاب میں کہا کہ میں کچھ بھی کہوں، کوئی بھی لفظ ادا کروں لیکن وہ الفاظ کریمّہ کی جہد کو، اُس کے کردار کو بیان نہیں کرسکتے ہیں۔ اگر آج مجھ میں ہمت ہے اپنے بابا کے لئے اور بلوچ مِسنگ پرسنز کے لئے آواز اُٹھانے کی ہمت ہے وہ کریمّہ کے دئیے ہوئے حوصلے سے ہے۔ اگر ہمیں کریمّہ کو خراجِ تحسین پیش کرنا ہے تو اُن کو جہد کو آگے بڑھا کر ہی ہم اُن کو خراج پیش کرسکتے ہیں۔

آمنہ بلوچ نے اپنے خطاب کا آغاز بلوچی شعر سے کیا اور کریمّہ کے ساتھ کریمّہ کی ماں امّا جمیلہ کا بھی شکریہ ادا کیا کہ جنہوں نے بہادری کا مظاہرہ کرتے ہوئے اپنی شیر بیٹی بلوچستان کے نام کی۔ کریمّہ کو“لُمّہءِ وتن”کا خطاب دیا گیا جو کریمّہ کی جہد کے ساتھ انصاف ہے کیوں کہ وہ نڈر خاتون فقط اپنی آرگنائزیشن کی دوستوں کی لُمّہ نہیں بلکہ ہم سب جہد کاروں کی لُمّہ ہے وہ بلوچ سرزمین کے لُمّہ ہے۔ آمنہ نے اپنے خطاب میں کہا کہ جو آج میرا شعور ہے بلوچ قوم کے لئے وہ شعور کریمّہ کی دی ہوئی ہے، اگر میں جہد نہ کروں بلوچ قوم کے لئے ادنا آواز نہ بن سکوں تو شاید میں کریمّہ کی مقروض رہوں گی۔ آمنہ نے آکر میں کہا کہ کریمّہ فقط بلوچ عورتوں کی نہیں بلکہ بلوچ معاشرے کے لئے ایک رول ماڈل ہے۔

آخر میں بلوچ قومی کماش واجہ میر محمد علی تالپور نے اپنے خطاب میں کہا کہ بانُک کریمّہ ایک دن میں پیدا نہیں ہوتی، بہت لمبا راستہ طے کرنا پڑتا ہے۔ واجہ تالپور نے مزید کہا کہ میں اُن پر قطعاً بات نہیں کروں گا جن کی وجہ سے کریمہ آج ہمارے درمیان موجود نہیں بلکہ آج فقط میں کریمہ پہ بات کروں گا کیوں کہ یہ دن کریمہ کا ہے جو ایک روشنی ہے جسے چاہ کر بھی کوئی روک نہیں سکتا۔ ہم بانُک کریمّہ کے قرض دار ہیں اگر ہم اُن کی جہد آگے نہ بڑھائیں، اگر ہم ہاتھ پہ ہاتھ دھرے بیٹھے رہیں تو شاید بانُک کے گنہگار بھی ہوجائیں گے، اگر ہم بانُک کو کچھ ٹریبیوٹ دے سکتے ہیں تو اُن کے جدوجہد کو آگے لے جانا ہے، اُس کے لئے کوشش کرنی ہے۔ واجہ تالپور نے اپنے خطاب کے آخر میں کہا کہ بلوچ نوجوانوں، ہار نہیں ماننی۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں