بھارت میں تو ہنگامے ہو تے، لیکن پاکستان میں اسلامی شدت پسندی معصوموں کی جان لے لیتی ہے۔ وویک سنہا

0
146

ہجوم کا جنون عقلیت، دانشمندی اور صوابدید سے محروم ہے۔ ایک بار جب ہجوم کرنے والے چارج سنبھال لیتے ہیں تو سمجھدار آواز بڑے پیمانے پر غصے کے شور میں دب جاتی ہے۔مہذب قوموں میں اس طرح کے فوری انصاف کی خدمتاور مجرموں کو قانونی دائرے میں رہتے ہوئے سزادی جاتی ہے۔ اسلامی جمہوریہ پاکستان میں ایسا نہیں ہے۔

 پاکستانی حکومت کے لئے اسلامی انتہا پسندی ہمیشہ سے اس طرح کی گدی رہی ہے کہ انتہاپسندوں کی طرف گامزن ہونا، بلکہ بنیاد پرست اسلام پسندوں کی بڑائی کرنا، ہمیشہ اسلام آباد کی ریاستی پالیسی رہی ہے۔ براہ راست نتیجہ یہ ہے کہ پاکستان بھر میں توہین مذہب کے ‘ملزمان’ کی ہجومی تشدد میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔

چند روز قبل ایک ذہنی طور پر غیر مستحکم شخص مشتاق احمد، جس پر قرآن پاک کی بے حرمتی کا الزام تھا، کو پاکستان کے صوبہ پنجاب کے ضلع خانیوال کی تحصیل میاں چنوں میں مشتعل ہجوم نے بے دردی سے قتل کر دیا تھا۔یہاں کلیدی لفظ الزام ہے، جس کا مؤثر مطلب ہے کہ کسی نے ابھی یہ الزام لگایا ہو گا کہ مشتاق احمد نے قرآن پاک کی بے حرمتی کی ہے۔ ہو سکتا ہے کہ یہ سچ ہو یا نہ ہو۔ اس معاملے میں مشتاق کی توہین عدالت میں کبھی ثابت نہیں ہوئی۔

پاکستانی صحافی فخر یوسفزئی نے مشتاق احمد کے قتل کو بیان کرتے ہوئے کہا کہ پاکستانی کسی کو بے دردی سے مارنا ان کی بنیادی ذمہ داری سمجھتے ہیں۔ یوسفزئی نے اپنے ویڈیو بلاگ میں وضاحت کی کہ “کیونکہ ہم جنونی ہیں اور انتہا پسندی کو پسند کرتے ہیں۔”

پاکستانی صحافی فخر یوسفزئی ہندستان کی طرف سے ایک اور ہجوم کے جنون کی وضاحت کر رہے ہیں، جس کا بہت چرچا ہے اور مسلمانوں کے خلاف بڑھتی ہوئی عدم برداشت کی مثال کے طور پر رکھا جاتا ہے۔

وائرل ہونے والی ویڈیو میں واضح طور پر دیکھا جا سکتا ہے کہ مسکان خان اپنے حجاب/نقاب کے ساتھ اس وقت آئیں جب ان کے کالج نے چہرے کو ڈھانپنے والے حجاب/نقاب/برقع پہننے پر سختی سے پابندی لگا دی تھی۔ اس کے باوجود مسکان خان نے حجاب پہن کر کالج انتظامیہ کو مشتعل کرنے کا انتخاب کیا۔ جب مسکان خان اپنی موٹر سائیکل کھڑی کرتی ہے تو اس کا سامنا ہندو مردوں کے ایک بڑے ہجوم سے ہوتا ہے۔

تمام زعفرانی لباس میں ملبوس ہندو مرد جو مسکان خان کو شری رام کے زور دار نعروں سے جھنجھوڑ رہے تھے کم از کم بیس تیس فٹ کے محفوظ فاصلے پر رہے اور کسی بھی وقت اس بھگوا پوش ہجوم نے مُسکان کو نقصان پہنچانے یا حملہ کرنے کے لیے اس کی جسمانی قربت میں آنے کی کوشش نہیں کی۔یہاں تک کہ مسکان خان کو بھی یقین تھا کہ اس زعفرانی لباس میں ملبوس ہجوم میں سے ایک بھی شخص اس کے قریب نہیں آئے گا اور نہ ہی اسے کسی بھی طرح نقصان پہنچائے گا، اتنا کہ وہ اللہ ہو اکبر کے طنز کے ساتھ جواب دے سکے۔

ایک اور اختلاف اشتعال انگیزی کی نوعیت پر ہے۔مسکان خان اور ان کے ساتھی ہندوستان کے حجاب تنازعہ میں اشتعال انگیزی کرنے والے ہیں۔ اسکولوں، کالجوں اور تعلیمی اداروں نے ہمیشہ اپنے اپنے اصول بنائے ہیں، جس میں ان کا ڈریس کوڈ بھی شامل ہے۔اقلیتوں کے زیر انتظام اسکولوں میں طلباء کے لئے اپنا لباس ضابطہ ہوسکتا ہے اور یہ ماڈل گذشتہ سات دہائیوں سے کامیابی سے چل رہا ہے۔حجاب کا تنازعہ ہندوستان کے لیے خراب نظریات پیدا کرنیکے لیے تیار کیا گیا تھا ۔

مسکان خان کی واقعہ کا موازنہ پاکستانی ٹک ٹوکر عائشہ اکرم سے کریں جن کے ساتھ 14 اگست 2021 کو لاہور میں دن کی روشنی میں چھیڑ چھاڑ کی گئی تھی، عائشہ اکرم اس دن لاہور کے گریٹر اقبال پارک میں ویڈیوز بنا رہی تھیں جب سیکڑوں افراد نے دن کی روشنی میں ان کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کی، بدبخت عورت کے کپڑے پھٹے ہوئے تھے اور اسے ٹرافی کی طرح ادھر ادھر بہایا گیا تھا۔ ہ واقعی ایک معجزہ ہے کہ عائشہ اکرم اس اجتماعی چھیڑ چھاڑ سے بچ گئیں۔ اور اس اجتماعی چھیڑ چھاڑ کی وجہ ایک بار پھر کچھ بے بنیاد ‘الزامات’ تھے- 4 دسمبر 2021 کو ایک اور واقعہ پیش آیا جس میں سری لنکا کے ایک شہری پریانتھا کمارا کو بے دردی سے پیٹ پیٹ کر ہلاک کر دیا گیا، اس کے جسم پر پٹرول ڈال کر آگ لگا دی گئی۔ایک بار پھر ہجوم کے جنون نے توہین مذہب کے بعض ‘الزامات’ پر کام کیا۔ پاکستان کے ایک تھنک ٹینک سینٹر فار ریسرچ اینڈ سکیورٹی اسٹڈیز (سی آر ایس ایس) نے اپنی تازہ ترین رپورٹ میں کہا ہے کہ 1947 سے 2021 تک کل 1415 توہین رسالت کے الزامات عائد کیے گئے جن میں سے 89 ہلاک ہوئے۔ توہین رسالت کے مقدمات سے بری ہونے کے بعد بھی ملزم غیر قانونی قتل کا شکار رہتا ہے۔ سی آر ایس ایس کی رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ 4 جولائی 2021 کو ایک پولیس اہلکار نے توہین رسالت کے الزامات پر ایک شخص کو قتل کر دیا تھا جس کے کئی سال بعد متاثرہ شخص کو عدالت نے اس الزام سے بری کر دیا تھا۔
بات یہ ہے کہ محض الزام یا بے ترتیب الزام پاکستان میں ہجوم کے جنون کو جنم دے سکتا ہے جو ملزموں کو وحشیانہ طور پر قتل کرنے کا باعث بنتا ہے۔ پاکستان میں ہجومی تشدد کے تقریبا تمام معاملات میں متاثرہ شخص پر ‘الزام’ لگایا گیا تھا اور ہجوم تشدد کا مرتکب تھا۔ اس کے برعکس ہندوستان میں مسکان خان اور ان کے جیسے دیگر لوگوں نے ہی کالج کے قوانین کی خلاف ورزی کرکے اور حجاب کا غیر ضروری تنازعہ کھڑا کرکے ایک دوسرے کو مشتعل کیا تھا۔

یہ بنیاد پرست اسلام پسندوں نے موجودہ منظر نامے کے مطابق جارح اور مظلومیت کا کردار ادا کرنے کے لئے اپنی چال کو تبدیل کرنے کی منصوبہ بندی کی ہے۔ ہندوستان میں مسلمان اقلیت میں ہیں لہذا ان کا حربہ یہ ہے کہ پہلے ہندو اکثریت کو مشتعل کیا جائے۔ اس کے بعد کسی بھی اقدام کو ہندوستانی مسلمانوں پر مظالم قرار دیا جاتا ہے۔ اسلامی جمہوریہ پاکستان میں جہاں مسلمان اکثریت میں ہیں تمام اختلاف رائے اور عقلی سوچ توہین رسالت کے قوانین کے نام پر ماری جاتی ہے۔ توہین رسالت اور ہجوم کے محض ‘الزام’ کو پاکستان میں ملزمان کو ذبح کرنے کا لائسنس مل جاتا ہے، یہاں بنیاد پرست اسلام پسند جارح کے طور پر کھیلتے ہیں۔ بدقسمتی سے مرکزی دھارے کے ذرائع ابلاغ کا ایک بڑا طبقہ اب بھی ہندوستان میں مسلمانوں کے خلاف بڑھتی ہوئی عدم رواداری کے بارے میں کہانیاں سنانے میں مصروف ہے۔
ہجوم کے ان جنون کے دوران بربریت، قتل و بربریت اور ہجوم پر تشدد کے بارے میں کبھی اوپی ایڈ کالموں میں بات نہیں کی جاتی اور نہ ہی پاکستان بھر میں بڑھتی ہوئی عدم رواداری کے بارے میں پاکستانی سرپرستی میں اداریہ لکھے جاتے ہیں۔کتنے افسوس کی بات ہے!یہاں تک کہ مسکان خان ہندوستان میں پیش کی جانے والی آزادی کا غلط استعمال جاری رکھیں گے اور کچھ فوری رقم کمانے کے لئے مسلم مظلومیت کارڈ کھیلیں گے، پاکستان میں مشتاق احمد کو پڑوسی ملک پاکستان میں مارا جاتا رہے گا۔

فخر یوسف زئی بجا طور پر کہتے ہیں: “کوئی بھی مسلمانوں کے خلاف سازش نہیں کر رہا ہے۔ہم خود یہ کام کر رہے ہیں۔ “

وویک سنہا۔ نیوز انٹرونشن کے بانی اور ایڈیٹر ان چیف ہیں،مختلف امور خاص کر ساوتھ ایشیاء پر اکثر لکھتے رہتے ہیں۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں