دی کشمیر فائلز” یعنی کشمیری ہندو پنڈتوں کی ان کہی داستان .ایچ وی جی

0
99




دی کشمیر فائلز" یعنی کشمیری ہندو پنڈتوں کی ان کہی داستان "کشمیر فائلوں" کے اجراء کو ایک ماہ سے زیادہ کا عرصہ ہو چکا ہے، جنہیں نفرت کے ایک غیر متزلزل نیزے نے اپنی آبائی زمینوں سے نکال دیا تھا۔ اس نسل کشی پر مقامی اور مرکزی حکومتوں اور ریاست کے پورے سیکورٹی آلات نے قابو نہیں پایا۔ یہ تصور کرنا کہ اقتدار میں موجود حکومتیں جن کے پاس پورے سیکورٹی آلات موجود ہیں، گمراہ لوگوں کے ڈاکوؤں کے گروہوں کے سامنے نامرد کھڑی ہیں، لامحدود ہے۔ اب ملک کو کشمیری ہندو پنڈتوں کے مسائل اور تکلیفوں سے دوچار کر دیا گیا ہے، وویک رنجن اگنی ہوتری کی طرف سے پروڈیوس اور ڈائریکشن کی گئی فلم کا شکریہ۔ یہ ایک ایسی فلم ہے جس کا وقت خاص طور پر ایک طرف آرٹیکل کی منسوخی کے بعد آیا تھا اور دوسری طرف خوفناک کہانی کو "قالین کے نیچے" رکھنے میں بظاہر کنسرٹیشن کے سبب آیا تھا۔ کیا کہانی بتانے کی ضرورت تھی؟





ویسے عوام کا رد عمل ہی اس بات کی نشاندہی کرتا ہے کہ ہندوستان کی ایک بڑی اکثریت کو ان ہولناک واقعات کا کوئی اندازہ نہیں تھا اور یہ خود اس بحث پر منحصر ہے کہ فلم بنانا صحیح تھا یا غلط۔ ہم ایک معاشرے کی حیثیت سے نفرت اور عصبیت کے ہر واقعے کی مذمت کرنا پسند کریں گے۔ ہم جمہوریت کے عظیم تصور کے مقروض ہیں جسے “ہندوستان” کہا جاتا ہے۔ انکار کے موڈ میں رہنا اتنا ہی اچھا ہے جتنا قتل عام کا جواز پیش کرنا۔ اب وقت آگیا ہے کہ باضمیر اس واقعے کو پہچانیں کہ یہ کیا تھا


فلم ساز کی بدولت کشمیری ہندو پنڈت کی خاموش اور دبی ہوئی آوازیں اب نہ صرف ہندوستان بلکہ دنیا بھر میں سنائی دے رہی ہیں۔ فلم ساز کا شکریہ
امریکہ اور متحدہ عرب امارات نے فلم کی نمائش کی اجازت دے دی ہے اور اس عمل سے دنیا کو ذہن اور نقطہ نظر میں ان کی معروضیت کا اشارہ ملا ہے۔ کچھ تبصرہ نگاروں کا کہنا ہے کہ کہانی فرقہ وارانہ ناپسندیدگی کو بھڑکاتی ہے۔ بات یہ ہے کہ ایک ایسی کہانی جس میں ایک غنڈہ حلیم کو دہشت زدہ کرتا ہے وہ تمام باضمیر لوگوں کی غیر جانبدارانہ حمایت حاصل کرنے کا پابند ہے۔ فلم سازوں نے زور دے کر کہا ہے کہ فلم حقائق پر مبنی واقعات پر مبنی ہے اور ان واقعات کی تصدیق کے لئے مختلف ذرائع ہیں ۔


درحقیقت چند کشمیری مسلمان ہونے والے مظالم کی تصدیق کرنے کے لیے ریکارڈ پر گئے ہیں۔ اس نسل کشی کے نتیجے میں کشمیری ہندو پنڈتراتوں رات اپنی آبائی زمینوں سے تمام تعلقات ترک کر کے جموں (ریاست جموں و کشمیر کا جنوبی حصہ) اور پھر دہلی فرار ہو گئے۔ کچھ آج تک پناہ گزینوں کی حیثیت سے وہاں رہتے ہیں۔ کچھ آہستہ آہستہ ملک اور دنیا کے دوسرے حصوں میں منتقل ہو گئے۔ کمیونٹی کی حیثیت اگرچہ آج تک وہی ہے جو کہ ’’مہاجرین‘‘ کی ہے۔ شاید یہ دنیا کی واحد مثال ہو جہاں ایک برادری کو اپنے ملک میں پناہ لینے پر مجبور کیا گیا ہے۔ محکومی، ظلم و ستم اور بنیاد پرستی کی ہر کہانی معروضی، ایمانداری اور اسی ہمدردی کے ساتھ بیان کرنے کی ضرورت ہے، چاہے وہ کشمیر میں کشمیری ہندو پنڈت کی نسل کشی ہو، ترکی کی طرف سے عیسائی آرمینیائی باشندوں کی نسل کشی یا چین کے صوبہ سنکیانگ میں مسلم اویغوروں کی محکومی۔ اس فلم کو دنیا کے تمام پاکستانی، الہان عمر، اردگان، مہاتیر محمد اور او آئی سی گروپ نگ دیکھ سکتے ہیں۔ انکار میں ہونا اس قتل عام کے لئے ان کی خاموش حمایت کی نشاندہی کرتا ہے۔ کیا یہ ان کی خود راستی کی حساسیت کے لئے قابل قبول ہوگا؟


“تہذیبوں کے تصادم” میں کمی کی ضرورت ہے۔ قوم، مسلک، نسل، مذہب، خطے کی تقسیم اب بھی باقی رہ سکتی ہے کیونکہ ان کی خواہش آسانی سے نہیں کی جا سکتی۔ لیکن تقسیم کو ہم آہنگی کے ساتھ ساتھ رہنا ہوگا کیونکہ ہم انسانی تاریخ کے ایسے موڑ پر ہیں کہ انسانی سرحد ہمارے اپنے سیارے سے بالاتر ہے جب ہم ارد گرد خلا کی وسیع وسعت کی طرف دیکھتے ہیں تو انسانی سرحد ہمارے اپنے سیارے سے آگے بڑھ جاتی ہے۔وہ انسانی قسم اگلی تہذیبی تعمیر ہے اور اس کے پاس فلکیاتی میلوں کا فاصلہ ہے۔ جوں جوں دنیا دن بدن اور بھی بہتر طور پر جڑی ہوئی ہے، جہاں ڈیجیٹل سرحد قومی حدود سے تجاوز کرتی ہے، جہاں “دوسروں” کا مسئلہ “انسان” کے لئے ایک مسئلے کے طور پر زیادہ سے زیادہ ظاہر ہو رہا ہے۔ معروضی آوازوں اور ذہنوں کو سننے اور اکٹھا ہونے کی ضرورت ہے تاکہ انسانیت کی فتح کے لئے پائیدار اور بامعنی حل تلاش کیے جا سکیں۔ ایک لمحے کے لئے اگر کوئی کشمیر کی کہانی میں ہندو مسلم بیانیے کو بھول جائے اور مظالم اور اس کے نتیجے میں خروج کو انسانیت کے خلاف غلط سمجھیں۔اسے فطری طور پر اور ظاہر ہے کہ “انسانیت کے خلاف جرم” سمجھا جائے گا۔ یہ بلاشبہ اس طرح کی اہلیت کے تمام خانوں کو نشان زد کر دے گا۔ لہذا سب سے پہلے اس بیانیے کو روکنے کی ضرورت ہے کہ یہ مسلمانوں بمقابلہ ہندو مسئلہ تھا، تاکہ اس پیشن گوئی سے بچا جا سکے جو قریب ہی ایک ٹوٹے ہوئے فیصلے کا باعث بنتی ہے۔ لوگ اس بات پر منحصر ہیں کہ وہ کس گروہ سے تعلق رکھتے ہیں۔اس معاملے کا ایک ثنائی نقطہ نظر اختیار کیا جاتا ہے جس کے نتیجے میں ایک گروہ کی دوسرے گروہ کے خلاف نفرت پیدا ہوتی ہے۔ صرف انتقام ہی سازشی ذہن کو ستائی دے گا۔ اچانک انصاف قابل بحث، بے نتیجہ، مبہم، نشان سے ہٹ کر اور شخصی ہو جاتا ہے۔ ہر گروپ اپنی پیشن گوئی کو صحیح ثابت کرنے کی کوشش کرتا ہے۔ انصاف کے اچانک کم از کم دو ورژن ہوتے ہیں۔ انصاف کا نقصان ہو جاتا ہے۔ کوئی معنی خیز تفہیم یا مقصد حاصل نہیں کیا جا سکا۔ لہذا ایسی کسی بھی تعمیر کو جو صرف ‘موضوعیت’ دیتی ہے اسے شعوری طور پر سائیڈ لائن کیا جانا چاہئے۔
پھر اس مسئلے کو کس طرح دیکھا جانا چاہئے؟


اس مسئلے کو دیکھنے کا ایک آسان طریقہ جو اس مسئلے کو حل کرنے میں مدد دے سکتا ہے وہ یہ ہے کہ اس عمل کو ایک بھائی کی طرف سے دوسرے بھائی کے خلاف کی جانے والی کارروائی کے طور پر دیکھنا۔ اس کے بعد صحیح اور غلط آسانی سے نظر آتا ہے۔ اس کے بعد صرف ایک قابل سوال جو جواب کا مطالبہ کرے گا وہ یہ ہوگا کہ کیا یہ عمل حلال اور صحیح تھا۔ اس کا جواب معروضی نتیجے پر پہنچنے میں مدد کرے گا۔


کیا انصاف اور حکومتوں کے اداروں کو صحیح کارروائی / سہارا لینے میں آسانی نہیں ہوگی؟
ہندوستان کا آئین ایک بھائی کو دوسرے بھائی کی بربریت کے خلاف تحفظ کی ضمانت دیتا ہے۔ایک بھائی اپنے بھائی کی بیوی کی عصمت دری کرتا ہے، ایک بھائی اپنے بھائی کے رشتہ داروں کو سرد مہری میں قتل کرتا ہے، ایک بھائی اپنے بھائی کی لاش کے بہیمانہ ٹکڑے کرنے اور ٹکڑے ٹکڑے کرنے میں ملوث ہوتا ہے، ایک بھائی دوسرے کی زمین اور جائیداد ہتھیانے والا ان تمام کاموں کی قانونی اور آئینی تدابیر کی ضمانت دی جاتی ہے۔
اب علاج کے لئے –
پہلی بات تو یہ ہے کہ مذہب کو تنازعہ سے وابستہ لوگوں کی شناخت سے الگ کر دو۔ہینڈ ہولڈ کریں اور ظالم بھائی کی کشمیر واپسی میں سہولت فراہم کریں۔
دوسرا قدم ظالم بھائیوں کی آبائی زمینوں پر بحالی کی حمایت کرنا ہوگا۔
تیسرا قدم وادی کشمیر میں رہنے والے باضمیر بھائیوں کی مدد سے انہیں مقامی معاشرے میں واپس ضم کرنا ہوگا۔
چوتھا قدم یہ ہوگا کہ اگر ثبوت سامنے آئے تو قانون کو مجرموں کے خلاف اپنا راستہ اختیار کرنے دیا جائے۔


بحالی اور انضمام کی ذمہ داری حکومت اور باضمیر بھائی کے کندھوں دونوں پر ہونی چاہئے؛ جیسا کہ زخم تیزی سے بھرتے ہیں جب اتون کرنے والا بھائی اینالگ لگاتا ہے تو زخم تیزی سے بھرتے ہیں۔ مہاتما گاندھی پر ایک مشہور فلم موجود ہے، جس کا نام ’’گاندھی‘‘ ہے۔ یہ منظر ہندوستان کے وسیع زمینی علاقے کو دو ممالک یعنی بھارت اور پاکستان میں تقسیم کرنے کا ہے۔ اس تقسیم کے نتیجے میں پاکستان سے ہندو ہندوستان اور مسلمان ہندوستان سے پاکستان منتقل ہوئے۔ یہ منظر دل دہلا دینے والا ہے کیونکہ دونوں برادریوں کے قافلے اپنی اپنی منزلوں کے راستے میں وحشی قصائی وں میں الجھ جاتے ہیں۔


الجھے ہوئے جذبات کا شکار ایک پریشان شخص مہاتما گاندھی کے پاس جاتا ہے ، (جو “موت کے روزے” پر ہے، متحارب دھڑوں کے درمیان امن کے لئے قائل کرنے کے لئے)، مشورہ لینے کے لئے دوسری کمیونٹی کے ایک بچے کو ذبح کرنے کے گھناؤنے جرم کا کفارہ دینے کے لیے۔ اسی طرح کے حالات کی وجہ سے اپنے بچے کو کھونے کے لئے یہ اس کا انتقام تھا۔ مہاتما گاندھی اس شخص کی آزمائش اور عمل سن کر تکلیف میں ہیں۔ گاندھی اس شخص سے کہتا ہے کہ اگر وہ حقیقی کفارہ چاہتا ہے تو اسے دوسری برادری کے بچے کو گود لینا چاہئے اور بچے کی پرورش اپنے طور پر کرنی چاہئے۔ اب وقت آگیا ہے کہ ہندوستان جمہوریت کے طور پر پختہ ہو جائے اور اس کا حقیقی اشارہ اس وقت ہوگا جب مذہب کو خالصتا ایک نجی عمل کے طور پر دیکھا جائے اور شہری کو اس کے مذہب سے حکومت کی نظر میں الگ کر دیا جائے۔
ہر شہری ایک جیسی مراعات حاصل کر سکتا ہے اور انہی ذمہ داریوں کے تابع ہوسکتا ہے۔ اگر کوڈ میں “یکساں سول کوڈ” کے طور پر کوئی نام نقش ہے تو اب وقت آگیا ہے کہ یہ ضابطہ ہمارے ملک میں قائم کیا جائے۔

ایچ وی جی مصنف ہندوستانی فوج کے ایک تجربہ کار ہیں، اور حالات کے مسائل پر ایک پل تلاش کرنے کے لیے متاثر ہیں۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں