شیعہ مذہبی رہنما نےحماس کے کارکنان کا بھگت سنگھ سے کیا موازنہ

0
21

مذہبی رہنما مولانا کلب جواد نے کہا کہ بمباری یہاں سے ہو یا وہاں سے، اسے روکنا چاہیے۔ بے گناہ لوگ مرنے جا رہے ہیں۔ اس کے ساتھ انہوں نے کہا کہ غزہ کی پٹی کے لوگوں کو پانی کی سپلائی منقطع کر دی گئی ہے، بجلی منقطع کر دی گئی ہے۔ اس کے ساتھ انہوں نے کہا کہ اگر اسرائیل نے 30 سال تک پانی اور ادویات کی بندش کی تو کیا وہ پیچھے ہٹ گئے؟ وہ پھر سے اٹھ کھڑے ہوئے۔ اس کے ساتھ انہوں نے دعویٰ کیا کہ آج وہ اسے مار دیں گے لیکن کل وہ دوبارہ کھڑا ہو جائے گا۔

اسرائیل اور فلسطین کی عسکری حماس کے درمیان شدید جنگ جاری ہے۔ دریں اثنا، جہاں بھارت اسرائیل کے ساتھ کھڑا ہے، وہیں اتر پردیش کے کئی حصوں میں اسرائیل کے خلاف احتجاج کی آوازیں گونج رہی ہیں۔ اس طرح ہندوستان میں لوگ اس جنگ کے حوالے سے دو حصوں میں بٹ گئے ہیں۔ ایک طبقہ ہے جو فلسطین کی عسکری تنظیم مخالفت کر رہا ہے اور ایک طبقہ ایسا بھی ہے جو حمایت میں کھڑا ہے۔ علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے بعد حمیر پور میں بھی پولس نے فلسطین کے حق میں کھڑے ہونے والوں کے خلاف کارروائی کی ہے، جب کہ لکھنؤ کی مساجد میں نماز جمعہ کے بعد مساجد میں فلسطینیوں کے لیے دعائیں کی گئیں۔

بتادیں کہ جمعہ کے روز لکھنؤ شہر کی آصفی مسجد اور عیدگاہ میں نماز جمعہ کے بعد فلسطین کے حق میں دعاؤں کا اہتمام کیا گیا تھا۔ اسرائیل کی حمایت میں لکھنؤ یونیورسٹی کے طلباء نے حضرت گنج میں مہاتما گاندھی کے مجسمے پر کینڈل مارچ نکالا۔ دوسری جانب شیعہ مذہبی رہنما مولانا کلب جواد نے فلسطین کی حمایت میں دوپہر کو آصفی مسجد میں نماز جمعہ کے بعد خصوصی دعاؤں کا اہتمام کیا تھا۔ عیش باغ عیدگاہ میں مولانا خالد رشید فرنگی محلی نے بھی فلسطین کی حمایت میں دعا کرنے کا اعلان کیا تھا۔

اب اس معاملے میں تازہ ترین اپ ڈیٹ سامنے آرہی ہے کہ شیعہ مذہبی رہنما مولانا کلب جواد نے حماس کےکارکنان کا موازنہ ہندوستان کے عظیم انقلابیوں بھگت سنگھ اور چندر شیکھر آزاد سے کیا ہے۔ ایک نجی نیوز چینل سے گفتگو کرتے ہوئے کلب جواد نے کہا کہ جس طرح بھگت سنگھ، چندر شیکھر آزاد، رام پرساد بسمل، اشفاق اللہ خان جیسے محب وطن انگریزوں کے لیے دہشت گرد تھے، اسی طرح حماس کو بھی دہشت گرد کہا جا رہا ہے، جب کہ حقیقت میں وہ دہشت گرد ہیں۔ محب وطن ہے.

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں