ہندوستانی زیر انتظام جموں کشمیر کے عروج اور مظفر آباد اور گلگت کے زوال کی کہانی۔۔

0
81

تحریر۔۔۔۔ علی گلگتی

اسی کی دہائی میں سیز فائر کے اس طرف پاکستان ٹیلی ویژن کے سوا معلومات کا کوئی زریعہ موجود نہیں تھا۔۔ مظفر آباد اور گلگت کے باشندوں کے ساتھ ساتھ سری نگر کی مسلم آبادی بھی گلگت اور مظفر آباد کو آزاد جبکہ سری نگر کو غلام سمجھتے تھے۔ اس پراپگنڈے سے متاثر ہوکے سری نگر کے کئی خاندان ایل او سی پار کرکے مظفر آباد آئے اور وہاں کی نوجوان اس طرف آکے ٹرینگ لے کے سری نگر میں جہاد سے منسلک ہونے لگے۔ ان کو دیکھا دیکھی پاکستان کے زیر انتظام علاقے کے نوجوان بھی سری نگر کی آزادی کے نام پر پراکسی وار کا حصہ بن گئے۔
ہزاروں نوجوان جان سے گئے ۔ سری نگر لمبے عرصے تک دہشتگری کے نظر رہا۔ 1988 سے 2004 تک کشمیر کے کئی گھرانے اُجڑ گئے ۔
ہزاروں خاندان مہاجر بن جے مظفر آباد کے کیمپوں میں آئے۔
سال 2004 کے بعد حالات بدلنے لگے۔ 2010 کے بعد سوشل میدیا کے آنے کے بعد چھپے ہوئے حقائق سامنے آنے لگے۔2018 کے بعد ہندوستانی حکومت کی کوششوں سے حالات بدلنے لگے۔ دہشتگردی کا خاتمہ ہوا اور کشمیر میں ترقی کے نئے دور کا آغاز یوا۔
اب لوگوں کو سمجھ آنے لگا کہ مظفر آباد اور گلگت میں لوگ بیروزگاری غربت, خوراک کی کمی کا شکار ہیں ۔ یہاں پر بنیادی انسانی حقوق کو وجود ہی نہیں جبکہ سرنگر, جموں , کرگل اور لداخ میں ترقی عروج پر ہے۔ جس وقت مظفر آباد اور گلگت کے لوگ آٹا اور بجلی کے لئے سڑکوں پر احتجاج کر رہے ہیں ٹھیک اسی وقت سری نگر عالمی فورم کی میزبانی میں مصروف تھا۔
اب لوگ پی ٹی وی پر یقین نہیں کرتے ہیں۔ اب ہر قسم کی خبر سوشل میڈیا پر مل جاتی ہیں۔
2023 میں مظفر آباد اور گلگت والے آٹا ٹماٹر , مہنگائی , غربت , بیروزگاری کے لئے رو رہیں ہے جبکہ ہندوستانی زیر انتظام والے حصے میں ہر شے سستی دستیاب ہے۔سیاحت عروج پر ہے, کاروبار ترقی کر رہا ہے۔ دنیا کے بڑے منصوبے لگ رہے ہیں۔ جدید ٹرین کی پٹریاں بچھائی جارہی ہیں۔۔۔
گزشتے تین سالوں میں مظفر آباد گلگت اور سکردو میں کوئی شاندار منصوبہ نہیں لگا ہے جبکہ دوسری طرف کی ترقی دیکھنے کے لائق ہے۔۔۔ پاکستان کو جنت سمجھ کے آنے والے لوگ آج بھی مہاجر کمپوں میں بدترین زندگی گزار رہے ہیں جبکہ سری نگر کے لوگ لندن والوں کے طرز کی زندگی گزار رہے ہیں۔ آئے مزید معلومات کے لئے ہم آپ قارئین کو ہندوستانی زیر انتظام حصے میں ہونی والی ترقی کی جھلک دیکھانے کے لئے حالیہ منصوبوں کی فہرست بتاتے ہیں جو کہ کچھ ہوں ہیں
جموں و کشمیر کے حالیہ سالوں میں کامیابیاں اور کامرانیاں
جموں و کشمیر کے یونین وفاقی علاقے نے تعلیم، صحت اور بجلی کے شعبوں میں ترقی کی ہے ، خاص طور پر نوجوانوں کو تعلیم، تربیت اور روزگار کے مواقع فراہم کرنے پر توجہ مرکوز کی گئی ہے۔

جموں کشمیر میں 50 نئے ڈگری کالجز، جن میں کل 25000 نشستیں ہیں، قائم
سات نئے میڈیکل کالج، جن میں 1400 اضافی میڈیکل/پیرامیڈیکل سیٹیں ہیں، سات نئے میڈیکل کالجز ، جن میں 1،400 اضافی میڈیکل/پیرامیڈیکل سیٹیں ہیں، آپریشنل کر دیا. پانچ نئے نرسنگ کالج اور ایک ریاستی کینسر انسٹی ٹیوٹ
یونین ٹیریٹری میں آ رہا ہے، مقامی کمیونٹیز کے لیے انتہائی ضروری صحت کی دیکھ بھال لا رہا ہے۔

انتظامیہ اسکول اور کالج کو یقینی بنانے کے لیے پروگراموں میں سرمایہ کاری کر رہی ہے۔
چھوڑنے والوں کو ان کی صلاحیتوں کے مطابق تربیت دی جاتی ہے۔
تربیت یافتہ 70 فیصد کو اجرت پر ملازمت دی جاتی ہے۔

خواتین کو مردوں کے مقابلے میں 10 سے 20 فیصد زیادہ سبسڈی مل رہی ہے۔
سال 23-2022 کے لیے مربوط ڈیری ڈیولپمنٹ اسکیم کے فوائد حاصل کرنا۔

جموں و کشمیر میں ماہانہ 1 لاکھ روپے سے زیادہ کمانے والی 40،000 سے زائد خواتین کو ملینیئر قرار دیا گیا ہے، جن میں سے 65 فیصد کاروباری ہیں۔

وزیراعظم کا ایمپلائمنٹ جنریشن پروگرام (PMEGP) تھا۔
2008 میں شروع ہوا اور اگلے چھ سالوں کے لیے14-2013 تک، KVIC نے صرف
جموں و کشمیر میں 10,401 PMEGP یونٹ۔ مرکزی سیکٹر اسکیم کے تحت 62,808 نوکریاں
30 نومبر 2022 تک جموں و کشمیر میں 7,851 معاون پروجیکٹوں کے ذریعے بنائے گئے تھے۔

جموں و کشمیر میں 21,640 PMEGP یونٹوں میں سے 16,807 (78 فیصد) کا تعلق ہے
سروس سیکٹر، یعنی یونٹس جیسے بیوٹی پارلر، بوتیک، کڑھائی،
موبائل/کمپیوٹر کی مرمت کی دکانیں، اور کھانے کی دکانیں۔ اس کے بعد 1,933 ہے۔
یونٹس (9 فیصد) دیہی انجینئرنگ اور بائیو ٹیکنالوجی جیسے سٹیل کے تحت
فیبریکیشن اور سٹیل کا فرنیچر، مصنوعی زیورات سازی، ورمی کمپوسٹ، اور
بائیو فرٹیلائزر یونٹس.

قرار دیا گیا ہے۔سوچھ بھارت مشن کے تحت جموں و کشمیر کو کھلے میں رفع حاجت سے پاک (ODF)

انڈین انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی (IIT) جموں اور انڈین انسٹی ٹیوٹ آف مینجمنٹ
(IIM) جموں کو فعال بنا دیا گیا ہے۔ سرکاری ڈگری کالجوں/ انجینئرنگ کالجوں کی تعداد 96 سے بڑھ کر 147 ہو گئی ہے۔

ایپل کے لیے ہائی ڈینسٹی پلانٹیشن اسکیم کا دائرہ کار رہا ہے۔
اس میں آم، لیچی، چیری، اخروٹ وغیرہ کشمیری زعفران شامل ہیں۔
جیوگرافیکل انڈیکیشن (GI) ٹیگ دیا گیا ہے۔

ملک کی 29 ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے 1500 کھلاڑی حصہ لے رہے ہیں۔
کھیلو انڈیا سرمائی کھیل جموں اور کشمیر کے گلمرگ میں منعقد ہوئے۔

بڑے ترقیاتی انفراسٹرکچر پروجیکٹس

پبلک ورکس (سڑکیں اور عمارتیں)
نیشنل ہائی وے-44، جموں سری نگر سیمی رنگ روڈ جموں/سری نگر
ڈرنگ توسمیدان روڈ کی تعمیر یعنی مگن بیرو کی سیتا ہارن اپ گریڈیشن
بڈگام روڈ۔
پی ایچ ای، آبپاشی اور فلڈ کنٹرول
فلڈ مینجمنٹ پلان جہلم اور اس کے معاون دریاؤں پر کام کرتا ہے سیلاب سے بچاؤ کے کام
بونار اور مہومتی نالہ واٹر سپلائی تنگنار واٹر سپلائی سکیم پر
کھریبل، رنبیر پورہ اننت ناگ واٹر سپلائی اسکیم سے یاتری شہر کٹرہ کے لیے
دھنسر نالہ۔

پاور ڈویلپمنٹ
غیر بجلی سے محروم دیہاتوں کی بجلی کاری دین دیال اپادھیائے گرام جیوتی یوجنا
اربن الیکٹریفیکیشن (R-APDRP) انٹیگریٹڈ پاور ڈیولپمنٹ اسکیم (IPDS) 86
شہر جموں و کشمیر کے ذریعہ سیاحتی مقامات کے ہائیڈرو الیکٹرک پروجیکٹوں کی زیر زمین کیبلنگ
SPDC/CVPPL۔
اعلی تعلیم
22 ڈگری کالجوں کی تعمیر 2 کلچر یونیورسٹیز IIM کا قیام، جموں آئی ایم سی، جموں

صحت اور طبی تعلیم
میڈیکل کالج، راجوری میڈیکل کالج بارہمولہ میڈیکل کالج اننت ناگ 200 بیڈڈ میٹرنٹی ہسپتال، جموں 200 بستروں والا میٹرنٹی ہسپتال، سری نگر۔

سیاحت
جموں روپ وے پروجیکٹ ڈیولپمنٹ آف بارڈر ٹورازم کی تعمیر
سوچیت گڑھ جموں توی گالف کورس سدھرا پٹنی ٹاپ روپ وے پروجیکٹ انٹر۔ کا دیو
اننت ناگ، کشتواڑ، پہلگام-دکسم-رنجیت ساگر ڈیم سرکٹ میں سیاحتی سہولیات ہمالیائی سرکٹ کے تحت بارہمولہ-کپواڑہ-لیہہ میں سیاحتی سہولیات کی مربوط ترقی۔ 2014 کے سیلاب کے دوران تباہ شدہ اثاثوں کے بدلے سیاحتی سہولیات کی تخلیق۔

ہاؤسنگ اور شہری ترقی
اٹل مشن فار ریجوینیشن اینڈ اربن ٹرانسفارمیشن (AMRUT) دال ترقی جنرل بس اسٹینڈ جموں کی جدید کاری/ ملٹی ٹائر پارکنگ کی ترقی جموں ہیبی ٹیٹ سنٹر۔

ان معلومات کو جاننے کے بعد ریاستی باشندے خود ہی فیصلہ کریں کہ کون آزاد کون غلام۔۔۔۔؟

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں