متحدہ عرب امارات کے صدر شیخ خلیفہ بن زید انتقال کر گئے

0
105

متحدہ عرب امارات کے صدر شیخ خلیفہ بن زید النہیان 73 برس کی عمر میں وفات پا گئے ہیں۔

وہ دنیا کے امیر ترین بادشاہوں میں سے ایک تھے۔

شیخ خلیفہ 2004 سے متحدہ عرب امارات کے صدر تھے لیکن 2014 میں سٹروک (فالج) کے حملے کے بعد سے ان کا کردار بڑی حد تک رسمی ہی رہا ہے۔ان کے سوتیلے بھائی محمد بن زید النہیان اب ریاستی امور کے انچارج ہوں گے۔

ایک اندازے کے مطابق النہیان خاندان کے اثاثے 150 ارب ڈالر کے قریب ہیں۔متحدہ عرب امارات کے صدر ہونے کے ساتھ ساتھ، شیخ خلیفہ ابوظہبی کے حکمران بھی تھے، جو متحدہ عرب امارات پر مشتمل سات امارات کا تیل سے مالا مال دارالحکومت ہے۔

24 جنوری 2014 میں شیخ خلیفہ کو فالج کا حملہ ہوا تھا جس سے ان کی صحت کافی متاثر ہوئی تھی۔بی بی سی کی ایک رپورٹ کے مطابق شیخ خلیفہ کے سوتیلے بھائی شیخ محمد بن زاید النہیان نے اس وقت کہا تھا کہ شیخ خلیفہ بن زاید النہیان ’ایک مشکل بحران سے گزرے‘ لیکن ’اس پر قابو پا لیا‘ گیا ہے۔

انھوں نے مزید کہا تھا کہ ریاست صدر کی صحت سے متعلق خبروں کو چھپانا نہیں چاہتی تھی۔

شیح خلیفہ پھر کافی عرصہ عوامی سطح پر سامنے نہیں آئے۔ اگرچہ ان کی مکمل صحت یابی میں بہت وقت لگا لیکن شیخ خلیفہ ساتھ ساتھ ملک کے سربراہ کے بھی فرائض نبھاتے رہے۔جب سنہ 2015 میں یمن میں حوثی باغیوں کے ایک حملے میں متحدہ عرب امارات کے تقریباً 50 فوجی مارے گئے تو اس وقت شیخ خلیفہ نے ہی جو کہ ابھی بھی اپنی بیماری سے مکمل طور پر صحت مند نہیں ہوئے تھے بطور ملک کے صدر فوجیوں کے خاندان والوں کو تعزیتی پیغامات بھیجے تھے۔

شیخ خلیفہ سنہ 2004 میں اپنے والد شیخ زید بن سلطان کی موت کے بعد متحدہ عرب امارات کے صدر بنے تھے۔ شیخ زید نے 1971 میں متحدہ عرب امارات کی فیڈریشن کی بنیاد رکھی تھی۔شیخ خلیفہ 2009 میں سات امارات جن میں دبئی، ابو ظہبی، شارجہ، عجمان، فجیرہ، ام القوین اور راس الخیمہ بھی شامل ہیں، دوسری مرتبہ پانچ سالہ مدت کے لیے صدر منتخب ہوئے۔

گزشتہ پچاس سال میں متحدہ عرب امارات کی ترقی پر نظر رکھنے والے کہتے ہیں کہ نہ صرف شیخ خلیفہ نے اپنے والد کی ترقیاتی وڑن کو قائم رکھا بلکہ ایک اپنے منفرد قیادت کے سٹائل کو بھی متعارف کرایا۔ متحدہ عرب امارات کے اخبار ’دی نیشنل‘ کے مطابق شیخ خلیفہ نے 1990 میں دیے گئے ایک انٹرویو میں کہا تھا کہ انھوں نے اپنے والد سے بہت کچھ سیکھا ہے۔میں ہر روز ان سے کچھ نہ کچھ سیکھتا ہوں، ان کے راستے پر چلتا ہوں اور ان سے ان کی اقدار اور ہر چیز میں صبر اور ہوشیاری کی ضرورت کو جذب کرتا ہوں۔‘

انھوں نے اس عزم کا اظہار کیا کہ وہ ’کھلے دروازے کی پالیسی اور ملک کے شہریوں کے ساتھ باقاعدہ مشاورت کے عمل کو جاری رکھیں گے، تاکہ میں ان کی ضروریات اور خدشات سے آگاہ ہو سکوں اور ان کا خیال کروں۔‘یو اے ای میڈیا کے مطابق شیخ خلیفہ سنہ 1948 میں ابو ظہبی سے تقریباً ڈیڑھ گھنٹے کی مسافت پر واقع شہر العین کے تاریخی المویجعی قلعے میں پیدا ہوئے تھے۔ مٹی سے بنا ہوا العین کی سر سبز وادی میں بنا ہوا یہ تاریخی قلعہ 20 ویں کے فنِ تعمیر کی ایک شاندار مثال ہے۔ اب یہ ایک سیاحتی مقام کے طور پر بھی جانا جاتا ہے۔ ان کی ابتدائی تعلیم بھی العین کے مقامی سکول میں ہی ہوئی، جو ان کے والد نے بنوایا تھا۔

سنہ 1966 میں جب شیخ زید ابوظہبی کے حاکم بنے تو شیخ خلیفہ کو مشرقی علاقوں میں ان کا نمائندہ مقرر کیا گیا۔ اس وقت شیخ خلیفہ کی عمر صرف 18 سال تھی۔ تین سال بعد ہی جب شیخ خلیفہ کو ولی عہد بنایا گیا تو اس وقت تک وہ برطانیہ کے سینڈہرسٹ کی فوجی اکیڈمی سے فوجی تربیت بھی حاصل کر چکے تھے۔ ولی عہد مقرر کیے جانے کے فوراً بعد انھیں ابو ظہبی کے دفاع کے شعبے کا چیئرمین مقرر کر دیا گیا۔

سنہ 1971 میں متحدہ عرب امارات کے قیام کے بعد شیخ خلیفہ کو ابو ظہبی کا وزیرِ اعظم بنایا گیا۔ اس دوران وہ کئی دیگر عہدوں پر بھی فائز رہے۔ وہ ابو ظہبی کی کابینہ کے سربراہ بھی تھے، وزیرِ دفاع اور وزیرِ مالیات بھی۔ سنہ 1973 میں انھیں متحدہ عرب امارات کا نائب وزیرِ اعظم مقرر کیا گیا۔ سنہ 1976 میں امارات کی فوج کا نائب کمانڈر بنایا گیا اور 1980 کی دہائی میں انھیں ابوظہبی کی سپریم پیٹرولیم کونسل (المجلس الاعلی للبترول) کا سربراہ مقرر کیا گیا۔ یہ عہدہ ان کی موت تک ان کے پاس رہا۔

اپنی زندگی کے آخری سالوں تک شیخ خلیفہ امارات کی ریاست کے ایک اہم ستون بن چکے تھے اور ملک کے سبھی باشندے انھیں قدر کی نگاہ سے دیکھتے تھے۔ اس دوران متحدہ عرب امارات نے کئی تاریخی لمحات دیکھے: 2019 میں پوپ فرانسس اول کا دورہ، اسی سال کے آخر میں متحدہ عرب امارات کے پہلے خلاباز کی پرواز اور اسرائیل کے ساتھ ابراہم معاہدے پر دستخط، جس کی وجہ سے سنہ 2020 میں امارات کے اسرائیل کے ساتھ تعلقات معمول پر آئے۔ ان سب اقدامات کے پیچھے شیخ خلیفہ کی بصیرت اور امارات کے دوسرے رہنماؤں کا ان پر مکمل بھروسہ شامل تھا۔

نومبر 2019 میں شیخ خلیفہ کو اتحاد کی سپریم کونسل نے چوتھی مرتبہ پانچ سالہ مدت کے لیے متحدہ عرب امارات کے صدر کے طور پر دوبارہ منتخب کیا اور یہ عہدہ بھی ان کی موت تک ان کے پاس تھا۔متحدہ عرب امارات کی صدارتی امور کی وزارت نے اعلان کیا ہے کہ ملک میں 40 روزہ سرکاری سوگ منایا جائے گا اور جھنڈے سرنگوں رہیں گے۔ وفاقی اور مقامی سطحوں پر وزارتیں اور سرکاری اداروں اور نجی شعبے میں تین دن کی بندش ہو گی۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں