میگا پراجیکٹس کے نام پر گوادر کی تباہی – آگاہی پروگرام منعقد کرینگے – ڈاکٹر ماہ رنگ

0
32

بلوچ یکجہتی کمیٹی کی رہنماء ڈاکٹر ماہ رنگ بلوچ نے ایک وڈیو پیغام میں کہا ہے کہ گوادر میں نام نہاد میگا پروجیکٹ بنایا گیا ہے اسکے بعد یہ تاثر دیا گیا ہے کہ گوادر اور اسکے باسی ترقی یافتہ بنائے گئے ہیں، لیکن سچائی اسکے برعکس ہے۔ نام نہاد پروجیکٹس کے نام پر گوادر کے ہر گلی کوچے میں چیک پوسٹ بنایا گیا ہے ۔ کوسٹ گارڈ سمیت دیگر فورسز کو سرکار نے یہ اجازت دی ہے کہ وہ گھروں میں گھس کر لوگوں کو لاپتہ کریں۔

انہوں نے کہاکہ گوادر کے صد سالہ قدیم روزگار کو ان سے چینا جارہا ہے ، آج ہزاروں لوگ بے گھر ہوچکے ہیں انکے مستقبل کا کوئی نہیں جانتا ہے۔ اس حوالے سے بلوچ یکجہتی کمیٹی نے ایک آگاہی پروگرام منعقد کرنے کا فیصلہ کیا ہے جس میں دانشور شریک ہونگے اور یہ بتایا جائے کہ گوادر کا انفراسٹیکچر کیسا بنایا گیا ہے جس گوادر کا جغرافیہ تبدیل ہوچکا ہے جس سے مقامی لوگوں کی زندگیوں مشکل بنائی گئی ہیں۔

انہوں نے کہاکہ ہم گوادر کے ان لوگوں کی آواز آگے لائیں گے جنکو کھبی سنا نہیں گیا ہے، گوادر کے تمام لوگ کل غوث بخش اسٹڈیم پہنچ جائیں اور پروگرام میں حصہ لیں ۔

دریں اثنا بلوچ یکجہتی کمیٹی نے پمفلٹ شائع کیا ہے جس میں لکھا گیا ہے کہ گوادر شہر میں کئی نام نہاد میگا پراجیکٹس کی وجہ سے حالیہ گوادر میں ہونے والی تباہی کسی سے بھی پوشیدہ نہیں رہی۔ صحت کے مختلف مسائل اور مادی نقصانات سے دوچار ہونے کے علاوہ گوادر بے گھر ہونے کے تناؤ میں ڈوبا ہوا ہے۔ 2024 کے سیلاب نے شہر کے باسیوں کی طرف عدم توجہ کی کیفیت کو مزید ظاہر کیا ہے، جو کئی دہائیوں سے غفلت کا شکار ہیں۔ مشکل وقت میں لوگوں کا ساتھ دینے اور ان کے شانہ بشانہ کھڑے ہونے کی ضرورت کو دیکھتے ہوئے بلوچ یکجہتی کمیٹی خطے میں پہنچی، تمام متاثرہ علاقوں کا دورہ کیا، تباہی کی تفصیلی رپورٹ تیار کی (جسے پہلے پریس میں بھی شیئر کیا گیا تھا) ، اور بلوچ علاقوں میں 3 روزہ اتحاد مہم کا آغاز کیا، جبکہ دنیا بھر سے لوگوں پر زور دیا کہ وہ اپنا تعاون پیش کریں۔ اتحاد مہم کے اختتام پر، ہم سیلاب کی وجوہات اور اثرات کے بارے میں لوگوں میں شعور بیدار کرنے کے لیے ایک آگاہی سیشن ترتیب دے رہے ہیں۔

پمفلٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ یہ آگاہی سیشن تمام متاثرہ علاقوں میں ذاتی سروے اور پچھلے کئی دنوں کے دوران لوگوں کے ساتھ بات چیت کا نتیجہ ہے۔ یہ گوادر میں تباہ کن سیلاب کے نتیجے میں متعدد قدرتی واقعات اور مصنوعی خامیوں کے بارے میں مختصر تفصیلات فراہم کرتا ہے۔ موسمیاتی تبدیلی کی مضبوط لہر کے پیچھے خود کو اور دیگر قوتوں کو شامل نہ کرتے ہوئے، لوگ ایسا لگتا ہے کہ سب کچھ فطرت کے بٹوے پر ڈال دیتے ہیں۔ اس سیشن کے ذریعے، ہم آپ کو موسمیاتی تبدیلی کی مختلف تکنیکی خصوصیات کے ساتھ ساتھ متعدد معیاری آپریٹنگ طریقہ کار (SOPs) سے آگاہ کریں گے۔ فطرت سے ہٹنے کے علاوہ، ان علاقوں کے لوگوں نے شہر کی تعمیر کی غلط اور مہلک ریاستی پالیسیوں سے دوری کے احساس کو ٹال دیا ہے۔

‘ہم اس سیشن کو اہم باتیں جاننے کے لیے انتہائی اہم قرار دیتے ہیں کہ کس طرح سیلاب گوادر میں لوگوں کے لیے بڑے پیمانے پر تباہی پھیلاتا ہے۔ سب سے بڑھ کر یہ کہ حقائق سے پردہ اٹھایا جائے گا کہ کس طرح ہم عام طور پر ہر چیز کو فطرت پر غلط نام دیتے ہیں جبکہ مصنوعی قوتوں بشمول غلط ریاستی اسکیموں کا بالواسطہ طور پر دفاع کرتے ہیں۔ اس سیشن میں آپ کی شرکت ضروری ہے تاکہ مستقبل میں تعمیرات، خود ساختہ میگا پراجیکٹس اور گوادر کی ترقی کے حوالے سے دھندلے خیالات سے متعلق مختلف امور پر تبادلہ خیال کیا جائے۔ ہم گوادر اور گردونواح کے تمام لوگوں سے کہتے ہیں کہ وہ ہمارے ساتھ طے شدہ آگاہی سیشن میں شامل ہو کر اتحاد کی امید کی کرن بنیں اور متاثرہ خاندانوں کے ساتھ کھڑے ہوں جب انہیں ہماری سب سے زیادہ ضرورت ہو۔’

مزید لکھا گیا کہ اکیسویں صدی میں جہاں سب کچھ واضح طور پر نظر آرہا ہے، اس کے باوجود اہم عوامل سے ناواقف ہونا اور متعلقہ قوتوں کو ان کے کرتوتوں کا جوابدہ نہ بنانا سب سے بڑی بدقسمتی ہے۔ لہٰذا، غیر منصفانہ پالیسیوں کے چھپے حقائق سے پردہ اٹھانے کے لیے سیشن میں شامل ہوں، قدرتی اور مصنوعی کئی بے ضابطگیوں کا پردہ فاش کریں، اور ایک مثبت قدم آگے بڑھائیں۔

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں